ٹی 10 لیگ: پی سی بی کا شفافیت پر آئی سی سی سے رابطہ

  کراچی:پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین احسان مانی نے شارجہ میں ہونے والی ٹی 10 لیگ کی شفافیت کے بارے میں آئی سی سی سے رابطہ کیاہے اور یہ بات واضح کردی ہے کہ وہ اس بارے میں مکمل اطمینان کرنا چاہتے ہیں۔یاد رہے کہ ٹی 10 لیگ 23 نومبر سے 2 دسمبر تک شارجہ میں منعقد ہونے والی ہے جس میں پاکستان سمیت متعدد ممالک کے بین الاقوامی کرکٹرز حصہ لیں گے۔اس سلسلے کی پہلی ٹی 10 لیگ گزشتہ سال شارجہ میں منعقد ہوئی تھی۔ دبئی میں انہوں نے کہا کہ جس لیگ میں بھی پاکستانی کرکٹرز کھیلتے ہیں اس بارے میں ازسر نو جائزہ لیا جارہا ہے اور وہ اس بات کو یقینی بنانا چاہتے ہیں کہ جو لوگ ان لیگز کو چلارہے ہیں ان کی ساکھ اچھی ہے یا نہیں ؟ احسان مانی نے خاص طور پر ٹی 10 لیگ کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ان سے پہلے جو لوگ پاکستان کرکٹ بورڈ میں تھے انہوں نے یہ بات نہیں دیکھی۔ پاکستان کرکٹ بورڈ میں اس بارے میں تحریری طور پر کوئی چیز موجود نہیں جو انہیں یہ بتاسکے کہ ٹی 10 لیگ کون لوگ کرارہے ہیں ؟ پاکستان کرکٹ بورڈ میں ان سے پہلے جو لوگ تھے انہوں نے یہ دیکھے بغیر ہی دستخط کردیے تھے کہ اس میں پاکستان کرکٹ بورڈ اور پاکستانی کرکٹرز کو کتنا پیسہ ملے گا؟ احسان مانی نے کہا کہ وہ اس بات کی پوری تسلی کرنا چاہتے ہیں کہ ٹی 10 لیگ کے منتظمین کون ہیں اور یہ کس کا پیسہ ہے؟ احسان مانی نے کہا کہ انہوں نے اس ضمن میں انٹرنیشنل کرکٹ کونسل سے رابطہ کیا ہے کیونکہ اس ٹی 10 لیگ کی اجازت آئی سی سی نے دے رکھی ہے۔ انہوں نے آئی سی سی سے کہا ہے کہ وہ لیگ کے معاملے کو دوبارہ دیکھے اور دوبارہ تحریری یقین دہانی کرائے کہ وہ اس سلسلے میں مکمل طور پر مطمئن ہے کہ اس لیگ میں کوئی ایسی بات تو نہیں جس سے پاکستان کی بے عزتی ہو۔احسان مانی نے کہا کہ گزشتہ سال ٹی 10 لیگ کی طرف سے پاکستان کرکٹ بورڈ کو 4 لاکھ ڈالر دیئے گئے تھے جبکہ اس بار یہ رقم تقریباً 6 لاکھ ڈالر ہے۔ وہ یہ سمجھتے ہیں کہ یہ رقم بہت کم ہے تاہم پیسے سے زیادہ اہم بات ان کے لیے ملک کی ساکھ ہے۔
کھیلوں کی مزید خبریں پڑھنے کیلئے اردونیوز'واٹس ایپ اسپورٹس" گروپ جوائن کریں

شیئر: