بلا ارادہ غلطی ہوئی جس سے بہت کچھ سیکھا،کرکٹ کپتان سرفراز احمد

کراچی:پاکستانی کرکٹ ٹیم کے کپتان سرفراز احمد کا کہنا ہے کہ جنوبی افریقی کھلاڑی کیخلاف جملہ کہنا میری غلطی تھی اور مجھے اس سے بڑا سبق ملا ہے ۔ انسان اپنی غلطیوں سے ہی سیکھتا ہے، مجھ سے بھی غلطی ہوئی جس سے سیکھنے کی کوشش کر رہا ہوں۔ ورلڈ کپ کیلئے ٹیم کی قیادت ملنے کے بارے میں سرفراز احمد نے کہا کہ ورلڈ کپ میں کپتانی کرنا میرے لئے اعزاز ہے، ورلڈ کپ سے قبل انگلینڈ کے خلاف ہمیں بھرپور تیاری کا موقع ملے گا ۔کپتانی کیلئے حمایت کرنے پر چیئرمین پی سی بی احسان مانی کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ پی سی بی کی حمایت سے بڑاحوصلہ ملا اور بطور کپتان اعتماد میں اضافہ ہوا۔ پاکستان اور جنوبی افریقہ کے درمیان ون ڈے میچز کی سیریز کے دوران افریقی بیٹسمین اور بولر فیلکوا پر فقرہ کسنے پر آئی سی سی کی جانب سے 4 میچوں کی پابندی سے متعلق سرفراز احمد نے کہا کہ ہر معاملے میں اللہ کی طرف سے بہتری ہوتی ہے کیونکہ اس پابندی کی وجہ سے آرام اور فیملی کے ساتھ وقت گزارنے کا موقع مل گیا جبکہ عام حالات میں اس کا امکان نظر نہیں آتا تھا، اس معاملے میں مجھ سے یقینی طور پر غلطی ہوئی اور میں نے بلا ارادہ اور بغیر سوچے سمجھے ایسی بات کر دی جس کی نزاکت اور نتائج کا مجھے کوئی اندازہ نہیں تھا ۔ دورہ جنوبی افریقہ کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ ہماری ٹیم امیدوں کے برعکس اچھا کھیلی، ہم میچز ضرور ہارے لیکن مجموعی طور پر ہماری کارکردگی بہتر تھی۔میچز کے دوران کئی مواقع ایسے آئے کہ پانسہ پلٹ سکتا تھا۔ ورلڈ کپ سے قبل دورہ انگلینڈ سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ اس ون ڈے سیریز سے اچھی تیاری ہوجائے گی اور کھلاڑیوں کو ماحول سمجھنے کا بہتر موقع ملے گا۔ امام الحق کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ امام الحق ذہنی طور پر مضبوط ہیں، چیف سلیکٹر انضمام الحق کا بھتیجا ہونا اپنی جگہ لیکن ہماری توجہ ان باتوں کے بجائے کارکردگی پر ہوتی ہے ، وہ باصلاحیت کھلاڑی ہیں۔اسی طرح بابر اعظم کی کارکردگی روز بروز بہتر ہورہی ہے ، ان کی بہترین بلے بازی دیکھ کر خوشی ہوتی ہے۔ محمد حفیظ اور شعیب ملک ٹیم کے سینیئر کھلاڑی ہیں جن سے ہمیشہ سیکھنے کا موقع ملتا ہے۔اس ورلڈ کپ میں پاکستان کی ٹیم بہتر نظر آئے گی ۔ آسٹریلیا اور انگلینڈ کے خلاف سیریز ہمارے لئے اچھے مواقع ہیں۔ قبل ازیںکوئٹہ گلیڈی ایٹرز اور اپنے اعزاز میں منعقدہ تقریب میں سرفراز احمد نے کہاکہ عمران خان میرے پسندیدہ کرکٹر رہے ہیں، ان کے پاس اسٹار کھلاڑی تھے اس لئے عمران خان سے موازنہ درست نہیں اور 1992 ءکا  ورلڈ کپ جیتنے والی ٹیم بہت زبردست تھی۔سرفراز پاکستان سپر لیگ میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے کپتان ہیں اور ان کا کہنا تھا کہ احمد شہزاد، عمر اکمل، سنیل نارائن اور ڈیوائن براوو کے آنے سے ہماری ٹیم مضبوط اور متوازن ہو چکی ہے ۔ پی ایس ایل کے بارے میں سرفراز نے کہا کہ فائنل کھیلنا ہماری پہلی ترجیح ہے۔اس موقع پر کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے مالک ندیم عمر نے کہا کہ مجھے سرفراز احمد کی صلاحیتوں پر مکمل اعتماد ہے اور جب تک سرفراز کھیلتے رہیں گے وہی کوئٹہ کے کپتان رہیں گے۔
 کھیلوں کی مزید خبریں اور تجزیئے پڑھنے کیلئے واٹس ایپ گروپ"اردو  نیوز اسپورٹس"جوائن کریں

شیئر: