انگلینڈ کا پاکستانی کرکٹ سے رشتہ!

شیراز حسن 
سنہ 1954 میں پاکستان کی ٹیسٹ کرکٹ ٹیم کا دورہ انگلینڈ۔۔۔ اوول کا میدان۔۔۔ اور فضل محمود کی میچ وننگز پرفارمنس تو سبھی شائقین کرکٹ کے اذہان پر نقش ہوگی لیکن کیا آپ کو یاد ہے کہ پاکستان نے انگلینڈ کی سرزمین پر اپنا پہلا ایک روزہ میچ کب کھیلا تھا اور اس کا کیا نتیجہ برآمد ہوا تھا؟
پاکستان، انگلینڈ اور کرکٹ کا رشتہ قیام پاکستان سے قبل ہی قائم ہو چکا تھا جب برطانوی راج کے دوران برصغیر پاک و ہند میں کرکٹ ٹیم کی بنیاد رکھی گئی۔
ٹیسٹ کرکٹ کے اس دور میں پاکستان اور انگلینڈ کے درمیان پہلا ایک روزہ میچ 31 اگست 1974 کو ناٹنگھم میں کھیلا گیا تھا۔ انتخاب عالم کی قیادت میں پاکستان نے دو ایک روزہ میچوں کی سیریز میں کلین سویپ کیا تھا اور پاکستان کے لیے یہیں سے کرکٹ کے ایک نئے باب کا آغاز ہوتا ہے۔
عالمی کپ ہو یا دو طرفہ سیریز، پاکستانی ٹیم کے لیے دورہ انگلینڈ روز اول سے ہی خاص اہمیت کا حامل رہا ہے شاید کسی حوالے سے اس کا تعلق برصغیر پر انگریزوں کی سو سال سے زائد حکمرانی سے بھی جڑتا ہے۔
پاکستانی ٹیم عالمی کپ کے آغاز سے قبل انگلینڈ کے خلاف پانچ ایک روزہ اور ایک ٹی 20 میچ کی سیریز کھیلے گی۔
ایسا بھی نہیں ہے کہ پاکستان کا دورہ انگلینڈ تنازعات سے خالی نہ رہا ہو، دوران سنہ 1987 میں فیصل آباد میں انگلش کپتان مائیک گیٹنگ اور پاکستانی امپائر شکور رانا کی تلخ کلامی، سنہ 1992 کے دورہ انگلینڈ کے دوران وقار یونس اور وسیم اکرم پر بال ٹمپرنگ کے الزامات، سنہ 2006 میں اوول ٹیسٹ کے دوران انگلینڈ کو پانچ پینلٹی رنز دینا اور پھر سنہ 2010 میں سپاٹ فکسنگ سکینڈل میں سلمان بٹ، محمد آصف اور محمد عامر پر پابندی جیسے واقعات کو بھلایا نہیں جا سکتا۔
بات کرکٹ ریکارڈز کی کی جائے تو انگلینڈ میں کھیلے گئے ایک روزہ میچوں میں پاکستان کرکٹ ٹیم کا پلڑا بھاری دکھائی نہیں دیتا۔
پاکستان نے اب تک انگلینڈ میں کل 74 میچ کھیلے ہیں جن میں سے اس نے صرف 33 میں کامیابی حاصل کی، 43 میں شکست کا سامنا ہوا اور ایک میچ بغیر کسی نتیجے کے ختم ہوا۔
  • 1975 عالمی کپ: ایک نیا آغاز
کرکٹ کے پہلے عالمی کپ کی میزبانی انگلینڈ نے کی تھی، ان دنوں ایک روزہ کرکٹ اپنے ابتدائی دور سے گزر رہی تھی۔ اس عالمی کپ میں پاکستان، انڈیا، انگلینڈ، آسٹریلیا، ویسٹ انڈیز اور نیوزی لینڈ کی ٹیمیں آئی سی سی کے فل ممبرز کے طور پر شامل ہوئیں جبکہ سری لنکا اور مشرقی افریقہ کی ٹیموں کو خصوصی طور پر مدعو کیا گیا تھا۔
کرکٹ کا پہلا عالمی کپ پاکستان کے لیے مایوس کن رہا تھا۔ آصف اقبال کی قیادت میں پاکستانی ٹیم کو اپنے گروپ میں ویسٹ انڈیز اور آسٹریلیا کے ہاتھوں شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ پاکستان نے عالمی کپ مقابلوں میں اپنی پہلی کامیابی سری لنکا کے خلاف حاصل کی تھی۔
ناٹنگھم میں کھیلے گئے اس میچ میں پاکستان نے پہلے بلے بازی کرتے ہوئےے مقررہ 60 اوورز میں چھ وکٹوں کے نقصان پر 330 رنز بنائے تھے۔ پاکستان کی جانب سے ظہیر عباس 97 رنز کے ساتھ نمایاں رہے تھے۔ اس کے جواب میں سری لنکا کی پوری ٹیم 118 رنز بنا سکی۔ عمران خان نے 15 رنز کے عوض تین وکٹیں حاصل کی تھیں۔
  • عالمی کپ 1979: سیمی فائنل تک رسائی