Sorry, you need to enable JavaScript to visit this website.

’عمران خان نے یہ دھمکی کسی سیاسی لیڈر کو دی یا کسی اور کو؟‘

مریم نواز نے عمران خان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ’جس دن آپ اقتدار سے نکلے عوام شکرانے کے نفل پڑھیں گے۔‘ (فائل فوٹو: اے ایف پی)
پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے اتوار کو ٹیلیفون پر شہریوں کے سوالات کے جوابات دیتے ہوئے ملک کی معاشی حالت، بڑھتی ہوئی مہنگائی، احتساب اور دیگر امور پر کھل کر بات کی۔
ان کی تمام باتوں میں سے مگر ایک بات ایسی تھی جس نے لوگوں کو کچھ حیرانی میں مبتلا ک ردیا۔
انہوں نے ایک موقع پر کہا کہ ’ہماری پارٹی انشا اللہ یہ ٹرم اور اگلی بھی ٹرم پوری کرے گی۔‘
’حکومت اپنی مدت پوری کرے گی‘ ایسے بیانات وزیراعظم اور ان کے وزرا پہلے بھی دیتے رہے ہیں لیکن اتوار کو انہوں نے یہ بھی کہا کہ ’میں آپ کو یہ بھی خبردار کردوں کہ اگر میں حکومت سے باہر نکل گیا میں آپ کے لیے زیادہ خطرناک ہوں۔‘
’ابھی تک تو میں چپ کر کے آفس میں بیٹھا ہوتا ہوں اور تماشے دیکھ رہا ہوتا ہوں۔ میں اگر سڑکوں پر نکل آیا نا تو آپ کے لیے چھپنے کی جگہ نہیں ہوگی۔‘
سوشل میڈیا پر صارفین وزیراعظم عمران خان کے ان جملوں کو اپنی مرضی کا رنگ دیتے ہوئے نظر آ رہے ہیں۔
پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے وزیراعظم عمران خان کے بیان پر ردعمل دیتے ہوئے ایک ٹویٹ میں کہا کہ ’آپ کی دھمکیاں کہ اقتدار سے نکالا گیا تو مزید خطرناک ہوجاؤں گا گیدڑ بھبکیوں سے سوا کچھ نہیں۔‘
مریم نواز نے مزید کہا کہ ’جس دن آپ اقتدار سے نکلے عوام شکرانے کے نفل پڑھیں گے۔‘
’آپ سازشی ہیں اور مکافات عمل کا شکار ہوئے ہیں۔‘

پاکستانی صحافی عنبر رحیم شمسی نے وزیراعظم کے انتباہ پر تبصرہ کرتے ہوئے لکھا کہ ’اس کا صرف مطلب یہ نظر آتا ہے کہ وہ (وزیراعظم) دباؤ محسوس کر رہے ہیں ورنہ لوگوں کو کیوں یاد دلاتے کہ وہ کیسے ردعمل کا اظہار کریں گے۔‘
وزیراعظم عمران خان کا بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب پاکستانی میڈٰیا میں اپوزیشن جماعتوں اور اسٹبلیشمنٹ کے درمیان کسی متوقع ڈیل پر قیاس آرائیاں ہو رہی ہیں۔
پاکستان میں نیویارک ٹائمز کے صحافی سلمان مسعود نے وزیراعظم خان کے انتباہ کو ان کے ناقدین کے لیے ایک پیغام قراد دیا۔

صحافی فخر درانی نے ایک ٹویٹ میں لکھا کہ ’خان نے یہ دھمکی آپ کے خیال میں کسی سیاسی لیڈر کو دی ہے یا کسی اور کو؟‘

وزیراعظم عمران خان کے جارحانہ انداز نے مشرف زیدی کو پاکستان تحریک انصاف کے دھرنوں کی یاد دلادی جب وزیراعظم بحیثیت اپوزیشن لیڈر کنٹینر پر کھڑے ہوکر تقاریر کیا کرتے تھے۔
انہوں نے اپنی ایک ٹویٹ میں لکھا کہ ’کنٹینر سرکار کو کنیٹنر کی یاد ستائے۔‘

شیئر: