آئی سی سی ایونٹ بھی پاکستان میں ہوسکتے ہیں، ڈیوڈ رچرڈسن

لاہور: انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی )کے چیف ایگزیکٹیو ڈیوڈ رچرڈسن نے کہا ہے کہ پاکستان میں کرکٹ کے معاملات اسی طرح درست سمت میں بڑھتے رہے تو آئندہ چند سال میں یہاں آئی سی سی ایونٹ بھی ہوسکتے ہیں۔ ورلڈ الیون اور پاکستان کے درمیان دوسرا ٹی ٹوئنٹی میچ دیکھنے کےلئے آنے والے رچرڈسن نے پی سی بی کے چیئرمین نجم سیٹھی کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے میچ اور سیریز کے حوالے سے جوش وخروش پرپاکستانی عوام کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے ورلڈ الیون کے دورے کےلئے پاکستان کرکٹ بورڈ اور پاکستانی سیکیورٹی ایجنسیوں کے اقدامات کی بھی تعریف کی۔رچرڈسن نے کہا کہ سیکیورٹی کا مسئلہ پوری دنیا کا ہے، تمام ممالک اور کھیل اس سے متاثر ہوئے۔ یہ سیریز یقینی طور پرپاکستان میں ہر قسم کی بحالی میں مدد گار ہوگی۔انہوں نے کہا کہ جائلز کلارک نے پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی بحالی کیلئے بہت کام کیا، کرکٹ فیملی یکجا ہے اور انٹرنیشنل کرکٹ کی بحالی میں سب ساتھ ہیں۔ آئی سی سی سربراہ نے کہا کہ ہماری توجہ پی ایس ایل کے میچز پاکستان میں کرانے اور دیگر رکن ممالک کو پاکستان میں کھلانے پر ہے۔ ہمارا مقصد پاکستان کو مشکل وقت میں مدد فراہم کرنا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ سب صحیح چلتا رہا تو آئی سی سی ایونٹ بھی پاکستان میں ہوسکتے ہیں۔2سال کے دوران پاکستان میں حالات بہت بہتر ہوئے ہیں۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ اگر بی سی سی آئی پاکستان سے کھیلنے پر رضامند نہیں تو آئی سی سی اسے مجبور نہیں کرسکتا۔ پاکستان اور ہند کے درمیان سیریز دونوں ممالک کی رضامندی سے ہوتی ہے۔انہوں نے کہا کہ آئی سی سی اپنے رکن ممالک کے درمیان قانونی چارہ جوئی کے خلاف ہے۔اس موقع پر نجم سیٹھی نے کہا کہ آزادی کپ آئی سی سی کے تعاون سے ممکن ہوا، ہمارے اس پلان کو جائلز کلارک اور رچرڈسن نے بہت سپورٹ کیا۔انہوں نے کہا کہ فیصلہ کیا ہے کہ سب سے پہلے کراچی اسٹیڈیم کو اپ گریڈ کیا جائے اور اس سلسلے میں ڈیڑھ ارب روپے کا پروگرام بنایا گیا ہے۔

شیئر: