برسوں معذوری کا ڈرامہ رچانے والا اطالوی باشندہ گرفتار

اطالوی پولیس نے برسوں معذور بن کر حکومت سے وظیفہ لینے والے جعل ساز کو گرفتار کرلیا ۔ گزشتہ 12 برس میں118.000 پونڈ بینیفٹ حاصل کرچکا ۔
اسکائی نیوز کے مطابق اطالوی عدالت میں اپنی نوعیت کا انوکھا مقدمے پیش ہوا ۔ پراسیکیورٹر نے بتایا کہ55 سالہ رابرٹو گولییلمی نے حکومت کو دھوکہ دیا ۔ خود کو معذور ظاہر کرکے برسوں بینیفٹ حاصل کر تا رہا ۔ اس نے 2007میں کا رحادثے کے بعد ویل چیئر پر آنے کا دعوی کیا تاہم حقیقت یہ تھی کہ کار حادثہ اور اس کے نتیجے میں ہونے والی معذوری جعلی تھی ۔
رابرٹو گولییلمی کو جعل سازی کا خیال اپنے معذور پڑوسی کو دیکھ کر آیا جسے حکومت ماہانہ وظفیہ دیتی تھی ۔ بے روزگار رابرٹو نے متعلقہ ادارے میں خود کو معذور ظاہر کیا۔ اس نے جعلی میڈیکل رپورٹ بھی حاصل کر لی جس میں کہا گیا تھا کہ رابرٹو ٹریفک حادثے میں معذور ہو گیا ۔ ریڑھ کی ہڈی میں لگنے والے چوٹ کے باعث وہ چلنے پھرنے سے قاصر ہے ۔
میڈیکل رپورٹ میں صحت یابی کی کوئی مدت درج نہیں کی گئی تھی ۔ معذوروں کی کفالت کرنے والے ادارے کی جانب سے رابرٹو کو ماہانہ وظیفہ جاری کر دیا گیا ۔
 رابرٹو مخصوص ویل چیئر پر برسوں گھومتا رہا اس دوران اسکے پڑوسیوں اور عزیزوں کو بھی یہ شک نہ ہوسکا کہ وہ معذورنہیں ۔ اس قدر فنکاری سے خود کو معاشرے میں پیش کرتا رہا جیسے وہ حقیقی طور پر معذور ہے ۔ اس نے اپنے پیروں کے مسلز کمزور کرنے کے لئے انجکشن کا سہارا لیا اور ڈاکٹروں کو بھی بے وقوف بناتا رہا۔
گولییلمی رابرٹواس دوران  فزیکل فٹنس کلب اور میڈیکل سینٹرکے ذمہ داروں کو بھی چکمہ دینے میں کامیاب رہا جہاں اسے فریوتھراپی کرائی جاتی تھی ۔ 
بالاخر اسکی جعل سازی پولیس پر عیاں اس وقت عیاں ہو گئی جب رابرٹو سالانہ تعطیلات پر ٹوگو گیا جہاں سے واپسی پر وہ یہ بھول گیا کہ وہ معذوری کا ڈرامہ رچائے ہوئے ہے ۔ 
رابرٹو چھٹیاں گزار کر فلورنس پہنچا تو بے خیالی میں چلتے ہوئے جہاز کی سیڑھیوں سے اتر گیا۔ فضائی کمپنی کے قانون کے مطابق معذور افراد کےلئے ویل چیئر جہاز کے دروازے تک پہنچائی جاتی ہے ۔ اسے چلتے ہوئے دیکھ کر جہاز کا عملہ حیران رہا گیا کیونکہ انہیں ہدایات ملی تھی کہ رابرٹو معذور ہے اور وہ ایک قدم بھی چل نہیں سکتا ۔ 
پولیس نے رابرٹو کو جعل سازی کے الزام میں گرفتار کر کے عدالت میں چالان پیش کردیا جہاں اسے حکومت کو دھوکا دینے کے الزام کا سامنا ہے ۔ مزید تفتیش کی جا رہی ہے۔ 
 
 

شیئر: