شاہ سلمان، ٹرمپ رابطہ، فائرنگ کی مذمت

شاہ سلمان نے امریکی صدر سے ٹیلیفونک رابطہ کرکے تین افراد کے ہلاک ہونے پرتعزیت کی ہے
سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبد العزیز نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے ٹیلیفونک رابطہ کرکے امریکی بحری اڈے پر سعودی طالبعلم کی فائرنگ سے تین افراد کے ہلاک ہونے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے تعزیت کی ہے۔
شاہ سلمان نے کہا ہے کہ ’مجھے انتہائی افسوس کے ساتھ یہ اطلاع ملی ہے کہ ایک سعودی طالبعلم نے مذموم اقدام کیا ہے جو سعودی عرب اور اس کے عوام کی کسی طور ترجمانی نہیں کرتا۔ سعودی عوام امریکہ کے لیے نیک جذبات رکھتے ہیں‘۔
بعد ازاں خادم حرمین شریفین شاہ سلمان بن عبد العزیز نے سعودی سیکیورٹی اداروں کو ہدایت جاری کی ہے کہ امریکی بحری اڈے میں پیش آنے والے واقعے کے حوالے سے امریکی حکام سے بھر پور تعاون کیا جائے۔
قبل ازیں امریکی ریاست فلوریڈا کے شہر پنسا کولا کے بحری اڈے پر ایک سعودی طالب علم نے فائرنگ کر کے تین افراد کو ہلاک کر دیا ہے۔
امریکی حکام کا کہنا ہے کہ حملہ آور کی شناخت ہوگئی ہے۔ وہ ایک سعودی طالب علم ہے جو بحری اڈے پر تربیت حاصل کر رہا تھا۔
حکام نے بتایا ہے کہ سعودی طالب علم کو حملے کے بعد گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا۔
بی بی سی کے مطابق مقامی شیرف کے دفتر نے حملے میں 8 دیگر افراد کے زخمی ہونے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ حملہ آور نے ایک ہینڈگن کا استعمال کیا۔
امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے واقعہ پر ٹویٹ کرتے ہوئے لکھا کہ ’شاہ سلمان نے فلوریڈا کے شہر پنساکولا میں ہونے والے حملے میں ہلاک اور زخمی ہونے والوں کے اہل خانہ اور دوستوں سے اظہار تعزیت کیا اور ان سے ہمدردی کا اظہار کیا ہے‘۔
انہوں نے کہا ہے کہ ’شاہ سلمان کا کہنا ہے کہ سعودی عوام حملہ آور کے وحشیانہ اقدام پر سخت برہم ہیں۔ حملہ آور کسی صورت میں امریکی عوام سے محبت کرنے والے سعودی عوام کے جذبات کی ترجمانی نہیں کرتا‘۔
واضح رہے کہ امریکی ریاست فلوریڈا کے شہر پنسا کولا کے بحری اڈے میں 16 ہزار ملٹری جبکہ 7 ہزار 400 سویلین کام کرتے ہیں۔
 

شیئر: