وزیر خارجہ شاہ محمود کا دورہ سعودی عرب

وزیر خارجہ کا دورہ سعودی عرب وزیر اعظم عمران خان کی دوست ملکوں کے ساتھ روابط کے فروغ کی پالیسی کا حصہ ہے فوٹو: پی آئی ڈی
پاکستان کے وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی استنبول میں ہارٹ آف ایشیا استنبول پراسس کانفرنس میں شرکت کے بعد سعودی عرب پہنچ گئے ہیں۔
کنگ خالد انٹرنیشنل ائرپورٹ ریاض پہنچنے پر سعودی عرب میں پاکستان کے سفیر راجہ علی اعجاز، سعودی وزارت خارجہ کے ڈی جی پروٹوکول عبداللہ ایم راشد اور پاکستانی سفارتخانے کے اعلی حکام نے وزیر خارجہ کا خیر مقدم کیا۔
جدہ میں سفارتی ذرائع نے اردونیوز کو بتایا وزیر خارجہ ایک دن کا دورہ کریں گے۔
وز یر خارجہ مختصر دورے کے دوران سعودی وزیر خارجہ سمیت اہم قیادت سے ملاقات کریں گے۔ ملاقات میں دوطرفہ تعلقات،کشمیر سمیت اہم علاقائی امور پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔
وزیر خارجہ کا دورہ سعودی عرب وزیر اعظم عمران خان کی خطے میں امن واستحکام کے لیے دوست ملکوں کے ساتھ روابط کے فروغ کی پالیسی کا اہم حصہ ہے۔
ہارٹ آف ایشیا کانفرنس میں شرکت کے بعد سعودی عرب کے دورے کو اہم سمجھا جا رہا ہے۔ حال ہی میں امریکہ اور طالبان کے درمیان مذاکرات کا سلسلہ بھی بحال ہوا ہے۔ توقع ہے کہ افغان امن عمل اور خطے کی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

وز یر خارجہ شاہ محمود قریشی سعودی وزیر خارجہ سمیت اہم قیادت سے ملاقات کریں گے فوٹو: پی آئی ڈی

پاکستان کے سرکاری خبر رساں ادارے کے مطابق استنبول میں ہارٹ آف ایشیا کانفرنس سے خطاب میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے افغانستان میں افغانوں کے زیرقیادت پائیدار امن، سلامتی اوراستحکام کے عمل کے لیے پاکستان کے عزم کا اعادہ کیا ہے۔
وزیر خارجہ نے کہا کہ ’عالمی برادری نے پاکستان کے اس دیرینہ موقف کی تائیدکی ہے کہ افغان تنازعے کاکوئی فوجی حل نہیں ہے۔ ہمارے خیال میں مسئلے کاواحد حل مذاکرات کے ذریعے سیاسی تصفیے میں مضمر ہے۔‘
 انہوں نے مزید کہا کہ خوشحالی کے بغیر امن قائم نہیں کیا جا سکتا اورشراکت داری کے بغیر خوشحالی نہیں آسکتی۔
شاہ محمود قریشی کا مزید کہنا تھا کہ ’خطے میں معاشی ترقی اور خوشحالی کے لیے محفوظ اور مستحکم افغانستان کی ضرورت ہے۔‘
 وزیرخارجہ نے ترک صدر رجب طیب اردگان اور ترک ہم منصب سے بھی کانفرنس کے موقع پر ملاقات کی ہے۔
 

شیئر: