Sorry, you need to enable JavaScript to visit this website.

سعودی خاتون نے گھر میں دس ہزار نوادر جمع کر لیے

ھویدا ہوساوی کا کہنا ہے کہ اب بھی نوادر جمع کرنے کا سلسلہ بند نہیں کیا۔ فوٹو: العربیہ
سعودی خاتون ھویدا ھوساوی نے دس ہزار نوادر جمع کر کے اپنے گھر کو میوزیم میں تبدیل کیا ہے۔
العربیہ نیٹ سے گفتگو کرتے ہوئے سعودی خاتون نے کہا کہ دس ہزار سے زیادہ نوادر 25 برس میں رشتے داروں اور دوستوں کی مدد سے جمع کیے ہیں۔ شروع میں یہ کام مشکل لگتا تھا لیکن میں اس کام کے لیے پرعزم تھی۔ جذبہ یہ تھا کہ نئی نسل اپنے بزرگوں کی استعمال کی گئی اشیا سے واقف ہو۔
ھویدا ھوساوی کا کہنا تھا کہ ’اللہ نے مجھے بڑا گھر دیا ہے جسے میں نے نوادر نے آراستہ کرکے عجائب گھر بنا دیا ہے۔‘

یہ نوادرات 25 برس میں جمع کیے گئے۔ فوٹو: العربیہ

سعودی خاتون نے بتایا کہ میرا گھر دو منزلہ ہے میں  نے اس میں تاریخی ملبوسات میں کام آنے والے آلات، مٹی کے برتن، پیتل کا سامان اور چمڑے سے بنی اشیا بڑی تعداد میں جمع کی ہیں۔
 ہویدا کے مطابق انہوں نے عجائب اور نوادرات کے شائقین کو حجاز کے گھروں، دکانوں اور سواریوں سے بھی متعارف کرانے کی کوشش کی ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ عجائب گھر میں اپنی دادی کی شادی کا سامان بھی سجایا ہو ا ہے۔ ستر برس پرانی اشیا یہا ں موجود ہیں۔ 

ہویدا نئی نسل کو اپنے بزرگوں کی استعمال کی گئی اشیا دکھانا چاہتی ہیں۔ فوٹو: العربیہ

سعودی خاتون کا کہنا تھا کہ ’مجھے قدیم ورثے سے لگاؤ ہے اور میری خواہش ہے کہ نئی نسل بھی قدیم دستی مصنوعات سے لگاؤ برقرار رکھے۔‘
ان کا کہنا ہے کہ اب بھی نوادر جمع کرنے کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔

شیئر: