لڑکیوں کے ساتھ زیادتی کی ویڈیو بنانے والے میاں بیوی گرفتار

تفصیلات کے مطابق صوبہ پنجاب کے شہر راولپنڈی میں پولیس نے ایسے میاں بیوی کو گرفتار کیا ہے جن کے بارے میں اس کا دعویٰ ہے کہ وہ لڑکیوں کے ساتھ جنسی زیادتی کی ویڈیوز بناتے اور انٹرنیٹ پر فروخت کر کے پیسے کماتے تھے۔
 راولپنڈی پولیس کی جانب سے اس شادی شدہ جوڑے کی گرفتاری اس وقت عمل میں لائی گئی  جب 5 اگست کو ایم ایس سی کی ایک طالبہ نے تھانہ سٹی راولپنڈی میں ایف آئی ار درج کروائی۔
راولپنڈی پولیس کے مطابق گرفتار ہونے والے میاں بیوی لڑکیوں کو جنسی تشدد کا نشانہ بنا کر ان کی نازیبا ویڈیوز بناتے اور انٹرنیٹ پر فروخت کرتے تھے۔ 
 متاثرہ طالبہ کی جانب سے درج ایف آئی آر کے مطابق ملزم نے اسے راولپنڈی میں کالج کے باہر سے اغوا کرنے کے بعد گلستان کالونی کے ایک گھر میں جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا جبکہ اس کی اہلیہ موبائل فون کے سے ویڈیو بناتی رہی۔ مدعیہ کے مطابق ملزمان نے اسے خاموش رہنے اور کسی کو بتانے کی صورت میں سنگین نتائج کی دھمکیاں دیں۔‘   
مقدمے کے تفتیشی افسر محمد عقیل نے اردو نیوز سے بات کرتے ہوئے کہا کہ پولیس نے مدعیہ کی جانب سے بتائے گئے پتے پر چھاپہ مار کر دونوں ملزمان کو گرفتار کر لیا ہے۔ 
راولپنڈی پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ ملزمان نے دوران تفتیش 45 کم عمر بچیوں کو زیادتی کا نشانہ بنانے کا اعتراف کیا ہے۔ ملزمان سے 10 بچیوں کی نازیبا ویڈیوز اور تصاویر بھی برآمد ہوئی ہیں۔ 
 دوسری جانب وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے سی پی او راولپنڈی سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔

شیئر: