Sorry, you need to enable JavaScript to visit this website.

سعودی خواتین فٹبالر ویمنز لیگ کے لیے پر جوش

ویمنز فٹبال لیگ کے آغاز کی امید پیدا ہو رہی ہے۔ (فوٹو عرب نیوز)
 سعودی خواتین جیسے جیسے ایتھلیٹک میں اپنے خوابوں کی طرف بڑھ  رہی ہیں جس میں فٹبال بھی شامل ہے ویسے ویسے ویمنز فٹبال لیگ (ڈبلیو ایف ایل) کے آغاز کی امید پیدا ہو رہی ہے۔ 
سعودی سپورٹس فیڈریشن نے سب سے پہلے فروری میں ڈبلیو ایف ایل کے آغاز کا اعلان کیا تھا تاہم کررونا وائرس کی وجہ سے اسے ملتوی کر دیا گیا۔
ڈبلیو ایف ایل کا انتظار بہت طویل ہے لیکن سعودی خواتین فٹبالر لاک ڈاؤن کے دوران تربیت حاصل کرتی رہی ہیں۔
کوچ بیرین صدقہ نے عرب نیوز کو بتایا ’جدہ ایگلز (ڈبلیو ایف ایل میں کھیلنے کے لیے منتخب کی جانے والی ٹیموں میں سے ایک) میدان میں اور میدان سے باہر لیگ کی تیاری کے سلسلے میں اپنی فٹنس کو بڑھانے اور اپنے فٹبال کو ذہنی طور پر مضبوط بنانے کے حوالے سے بہت سخت پریکٹس کر رہی ہیں۔
انہوں نے مزید کہا ’لاک ڈاؤن نے ہمیں اپنے آپ کو بہتر بنانے کی خواہش سے باز نہیں رکھا۔ ہم اپنے گھروں میں تربیت جاری رکھتی ہیں جتنا ہم دستیاب جگہ اور سامان کی مدد سے کر سکتے ہیں۔ ورزش اور فٹ بال کی مشقیں ہمیں بھیجی گئیں۔ پھر جیسے ہی یہ قابل قبول تھا ہفتے میں باقاعدگی سے تین بار تربیت دوبارہ شروع کی گئی ۔‘
سعودی ایڈورٹائزنگ کی سینئیر طالبہ 22 سالہ ھالہ منصوری ویسٹ ورجینیا میں رہتے ہوئے 6 سال کی عمر سے ہی فٹ بال کھیل رہی ہیں جہاں وہ وائی ایم سی اے کے عالمی اتحاد میں شامل ہوئیں اور انہیں اس کھیل سے محبت ہو گئی۔
برسوں بعد مملکت واپس آنے پر وہ گاہے بگاہے فٹبال کھیلتی رہیں لیکن وہ ہمیشہ سے جانتی تھیں کہ قسمت ان کے دروازے پر دستک دے گی اور جسیے ہی لاک ڈاؤن ختم ہوا وہ جدہ ایگلز کلب میں گول کیپر کی حیثیت سے شامل ہو گئیں۔
انہوں نے عرب نیوز کو بتایا ’جب میں امریکہ رہتی تھی تو اس وقت ساکر اور باسکٹ بال کھیلتی تھی لیکن جب جدہ واپس آئی تو مجھے فٹبال کھیلنا زیادہ پسند تھا۔‘

ھالہ منصوری 6 سال کی عمر سے فٹ بال کھیل رہی ہیں(فوٹو عرب نیوز)

گول کیپر ہونے کی وجہ سے کیا فرق پڑتا ہے اس کی وضاحت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ اتنا مشکل نہیں تھا جتنا دوسری پوزیشنز پر کھیلنا لیکن فرق یہ تھا کہ گول کیپر پورا میدان دیکھتے ہیں کیونکہ انہیں گیند پر گہری نگاہ رکھنی ہوتی ہے اور اپنا مزاج ٹھنڈا رکھتے ہوئے پوری توجہ مرکوز رکھنی ہوتی ہے۔
ھالہ منصوری کا مزید کہنا تھا ’ہم اپنے ٹیم کے ساتھیوں سے بات کر سکتے ہیں تاکہ وہ جان سکیں کہ کہاں جانا ہے لیکن فرق یہ ہے کہ ہماری تربیت مختلف ہے۔ وہ ہم سے زیادہ گول کرتے ہیں۔ میں گیند کو روکنے کے لیے اپنے پورے جسم کا استعمال کرتی ہوں اور اسٹرائیکر زیادہ خوفزدہ ہوجاتے ہیں اگر وہ گول مس کرتے ہیں یا نہیں۔ ایک گول کیپر کی حیثیت سے  میری پریشانی صرف یہ ہے کہ اگر گیند گول لائن سے گزر جائے۔‘
انہوں نے کہا اگرچہ گول کیپر بعض اوقات کم تر پسندیدہ کھلاڑی ہوتے ہیں لیکن  تربیت ابھی بھی سخت اور ضروری تھی۔ گول فٹبال میں گول کیپرز گولز فٹ دفاع کی آخری لائن ہیں۔

جدہ ایگلز کلب میں گول کیپر کی حیثیت سے شامل ہیں۔(فوٹو عرب نیوز)

نوجوان ایتھلیٹ کا کہنا تھا کہ فٹبال نے انہیں روزمرہ کی پریشانیوں سے دور ایک آزاد احساس مہیا کیا۔ ’کھیل کے دوران میں کسی چیز کے بارے میں نہیں سوچتی سب کچھ خاموش کر دیا گیا اور یہ تھوڑی دیر کے لیے وقفہ ہے۔ یہ سب سے اچھا احساس ہے۔‘
انہوں نے کہا ’مجھے فخر ہے کہ خواتین کو کھیلوں میں اپنے خوابوں کی تعبیر حاصل کرنے میں بہت زیادہ سپورٹ ملی ہے اور ہمارے اہل خانہ ایسا کرنے پر ہم پر فخر کر سکتے ہیں۔‘ 
 ’یہ ایک اچھا احساس ہے اگرچہ ہم دوسرے ممالک کے مقابلے میں تھوڑی دیر بعد آئے ہیں لیکن کم سے کم ہمیں ایسی جگہ مل گئی جہاں اب ہم خواتین کے لیے ہیں اور مجھےاس سے زیادہ کسی بات پر فخر نہیں ہو سکتا ہے۔‘
اب تک صرف سعودی شہریوں کو ہی فٹبال کھیلنے کی اجازت ہو گی لیکن اس سے مملکت کی دیگر خواتین فٹبالروں کے جوش و جذبے کو کم نہیں کیا گیا۔

سعودی خواتین فٹبالر لاک ڈاؤن کے دوران تربیت حاصل کرتی رہی ہیں۔(فوٹو عرب نیوز)

24 سالہ یمنی سعودی شھد سیف جو جدہ کے میراس ایف سی کے لیے لیفٹ بیک کی پوزیشن پر کھیلتی ہیں نے کہا کہ وہ 10 سال کی عمر سے جدہ میں اپنے کنبہ کے ساتھ فٹبال کھیلتی ہیں۔
انہوں نے عرب نیوز کو بتایا ’میں اپنے کنبے اور بھائیوں کے ساتھ بچپن سے ہی فٹ بال کھیل رہی ہوں۔ مجھے آل وومن گروپ کے ساتھ کھیلنے کا موقع نہیں ملا۔ جب میں بڑی ہوئی تو میں ایک فیلڈ کرایہ پر لیتی تھی اور لڑکیوں کے ساتھ فٹ بال کھیلتی تھی جو بغیر کسی کوچ کے کھیل کھیلنا پسند کرتی تھیں۔
فٹبال ہمیشہ سے ان کی زندگی کا ایک اہم حصہ رہا ہے  اور اس کھیل نے ان کی تمام عادات اور فیصلوں پر اثر ڈالا ہے۔ ’اس کے لیے کسی کمیونٹی کی تلاش بہت ضروری تھی صرف اس وقت ہم کر سکتے تھے جم میں جانا تھا۔
میراس فٹبال ایک سال پہلے جدہ میں قائم ہوا تھا اور لیفٹ بیک کی پوزیشن پر کھیلنے والی شاہد سیف اس کے بانیوں میں سے ایک تھیں ہم نے ہر وہ چیز فراہم کی جس کی لڑکیوں کو فٹبال کھیلنے کے لیے ضرورت تھی۔
جدہ کے کنگز یونائیٹڈ کی 26 سالہ اریٹریئن مڈفیلڈر امل جیمی آٹھ سال کی عمر سے فٹبال کھیل رہی ہیں۔ اگرچہ وہ اس میں حصہ نہیں لیں گی  لیکن اپنے شوق کی پیروی اور اپنی صلاحیتوں کو بہتر بنانے سے نہیں روک سکیں گی۔

خواتین کو آخر کار اس کھیل سے اپنی محبت  کے اظہار کا موقع ملا ہے۔( فوٟٹو اے ایف پی)

امل جیمی نے  عرب نیوز کو بتایا ’ہر ہفتے کے آخر میں ایک میچ ہوتا تھا۔ شروع میں لڑکوں نے ہمیں گول کیپر کی حیثیت سے کھیلانا شروع کیا۔ 2002 میں جب میں نے پہلی بار ویمنز ورلڈ کپ دیکھا تو اس کھیل کے بارے میں مزید معلومات حاصل کرنے کا جذبہ بڑھا۔ جیمی نے 2014 میں ریاض میں اپنی پہلی خواتین فٹبال ٹیم ’چیلنج‘ میں شمولیت اختیار کی۔
ان کا کہنا تھا ’یہ پہلا موقع تھا جب میں کسی منظم چیز میں شامل ہوئی۔ مجھے کھیل کر خوشی ہوئی لیکن اسی وقت میں نے محسوس کیا کہ یہ ناقابل رسائی مقصد تھا (ایک پیشہ ور ایتھلیٹ بننا یا آفیشل لیگ میں شامل ہونا) مجھے ایسا لگا جیسے میں کچھ بھی حاصل کیے بغیر بڑی ہو رہی ہوں۔‘
امل جیمی نے کہا ’ میں وہ انسان ہوں جسے زندہ رہنے کے جذبے کی ضرورت ہے۔ میں بغیر مقصد کےزندہ نہیں رہ سکتی۔ چونکہ میں بچی تھی میں جانتی تھی کہ میں فٹبال کا کھلاڑی بننا چاہتی تھی۔ ساکر نے میری شخصیت اور عزم کو تبدیل کیا ہے اور یہ ایک ایسا خواب تھا جس کے بارے میں مجھے یقین نہیں تھا کہ یہ کبھی حقیقت میں بن جائے گا لیکن مجھے جاری رکھنے کا عزم تھا۔ میں نے ٹیم ورک اور لوگوں کے ساتھ تعلقات کو برقرار رکھنے کے طریقہ کار کے بارے میں بہت کچھ سیکھا۔
 کنگز یونائیٹڈ کی کوچ الہام العامری نے عرب نیوز کو بتایا کہ خواتین کو آخر کار اس کھیل سے اپنی محبت کا مظاہرہ کرنے کا موقع ملا ہے۔

شیئر: