’شکریہ کپتان، آپ کو یاد رکھا جائے گا‘

سرفراز احمد پر کافی عرصے سے تنقید کی جارہی تھی (فوٹو:اے ایف پی)
پاکستان کرکٹ بورڈ کی جانب سے سرفراز احمد کو ٹیسٹ اور ٹی 20 کی کپتانی سے ہٹانے جانے کے بعد سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر کہیں ان کے ہٹانے جانے پر خوشی کا اظہار کیا جارہا ہے تو کہیں ان کی ماضی کی اچھی کارکردگی کے بارے میں ٹویٹس کی جا رہی ہیں۔
واضح رہے کہ گذشتہ 2019 کے ورلڈ کپ میں کپتان سرفراز کی کارکردگی پر کافی تنقید ہوئی تھی اور ان کو کپتانی سے ہٹائے جانے کے مطالبات سامنے آئے تھے۔
پی سی بی کی جانب سے ٹیسٹ ٹیم کی کپتانی کے لیے اظہر علی اور بابر اعظم کو ٹی 20 ٹیم کا کپتان بنایا گیا ہے۔
سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ایک صارف آصف نے پاکستان کرکٹ بورڈ کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا ’ میں بہت خوش ہوں، سرفراز کو ٹیم میں رکھنے کا کوئی فائدہ نہیں ہے۔‘
صحافی فیضان لاکھانی نے ٹویٹ کی کہ اگر پاکستان کرکٹ بورڈ نے ان کو برطرف بھی کرنا تھا تو ان کو قابل احترام طریقے سے کپتانی سے ہٹا دیتے۔ یہ اچھا ہوتا کہ سرفراز کو موقع دیا جاتا کہ وہ خود ہی اپنے عہدے سے مستعفی ہوجاتے۔
محمد یاسر خان سواتی نے ٹویٹ کی کہ سرفراز احمد کو ہٹانا بہترین فیصلہ ہے۔
شعیب جٹ نامی ایک صارف نے کچھ میچوں کا ایک ٹیبل شیئر کیا اور کہا ’ایک کو بری پرفارمنس پر ہٹایا اور دوسرے کو بری پرفارمنس پر کپتان بنایا گیا۔‘
لیکن ان کے ساتھ زاہد نامی ایک صارف نے اتفاق نہیں کیا اور کہا کہ جیسے آپ نے تین میچوں کی پرفارمنس دکھا دی ایسے ہی سرفراز اور بابر کی دو برسوں کی پرفارمنس دکھا دیں۔
شاؤن نامی ایک صارف نے لکھا کہ ’ شکریہ کپتان، آپ کو یاد رکھا جائے گا، خاص طور پر ٹی 20 میچوں کے لیے۔‘
مبران حسن 17 نامی ایک ٹوئٹر ہینڈلر نے پاکستان کرکٹ بورڈ اور مصباح الحق پر تنقید کرتے ہوئے کہا ’وہ کپتان جنہوں نے چیمپئن ٹرافیاں جیتیں اور 11 مسلسل ٹی 20 سیریز جیتیں ان کو کپتانی سے ہٹایا گیا جب ٹی 20 سیریز کے لیے ورلڈ کپ میں ابھی 12 مہینے رہ گئے ہیں۔‘

عثمان گل نامی صارف نے سرفراز احمد کو ہٹانے پر شکر ادا کیا۔

ٹوئٹر صارف فواد خان نے لکھا کہ ’ مصباح اور وقار کو بچانے کے لیے سرفراز کو ہٹایا گیا، ایک برا اقدام، مصباح اور وقار سے پہلے پاکستان ٹی 20 میچوں میں نمبر ون تھا، بہت برا ہوا۔‘

ایک صارف بولے مصباح کی پہلے بہت عزت کرتا تھا لیکن پھر انہوں نے کپتان کو نکال لیا۔
جبران احمد نامی صارف کے مطابق ٹی 20 میچ کے لیے بابر اعظم کو کپتان بنانا تباہ کن فیصلہ ہے، وہ ابھی سیکھ رہا ہے اس کو اپنی بیٹنگ پر توجہ دینی چاہیے۔
ان کا کہنا تھا کہ کپتان بننے سے پہلے سرفراز احمد ایک بہتر بیٹسمین تھے۔
سابق کپتان سرفراز احمد نے 49 ٹیسٹ میچز کھیلے جبکہ 116 ایک روزہ میچز اور 58 ٹی 20 میچز کھیلے۔ گذشتہ کچھ عرصے سے پاکستان کرکٹ ٹیم کی خراب پرفارمنس کی وجہ سے ان کو تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔
واٹس ایپ پر پاکستان کی خبروں کے لیے ’اردو نیوز‘ گروپ میں شامل ہوں

شیئر: