سیاچن: برفانی تودہ گرنے سے چار انڈین فوجی اور دو قلی ہلاک

حکام کے مطابق کہ آٹھ فوجی معمول کی گشت پر نکلے ہوئے تھے کہ برفانی تودوں کی زد میں آ گئے۔ فوٹو:اے ایف پی  
انڈین فوج کے چار اہلکار اور دو پورٹر (قلی)  شمالی سیاچن گلیشیئر کے برفانی تودوں میں پھنس کر ہلاک ہو گئے جبکہ دو زخمی ہوئے ہیں۔
یہ واقعہ پیر کو پیش آیا۔
حکام نے بتایا ہے کہ آٹھ فوجی اہلکار معمول کی گشت پر تھے کہ برفانی تودوں کی زد میں آ گئے۔  
فوجی حکام کا کہنا ہے کہ ان کی ہلاکت ہائپوتھرمیا یعنی انتہائی ٹھنڈ کی وجہ سے ہوئی ہے۔  
 انڈیا کے وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے ایک ٹویٹ کے ذریعے ان فوجیوں کو خراج عقیدت پیش کیا ہے۔ انھوں نے لکھا ’سیاچن میں فوجیوں اور پورٹرز کی ہلاکت پر انتہائی دکھ ہوا۔ میں ان کی ہمت اور وطن کے لیے ان کی خدمات کو سلام کرتا ہوں۔ ان کے اہل خانہ سے میری دلی تعزیت۔‘
فوجی حکام نے خبررساں ادارے آئی اے این ایس کو بتایا کہ یہ فوجی ایک پٹرولنگ ٹیم کا حصہ تھے۔ وہ سطح سمندر سے 18 سے 19 ہزار فٹ کی بلندی پر برفانی تودوں کی زد میں آ کر پھنس گئے تھے۔
برفانی تودوں کے گرنے کا واقعہ پیر کو تین بجے سہ پہر کو 19000 فٹ کی بلندی پر پیش آیا۔ پھنسے ہوئے فوجیوں کو نکالنے کے لیے وسیع پیمانے پر امدادی آپریشن کیا گیا اور تمام فوجیوں کو وہاں سے نکال لیا گيا اور زخمیوں کو ہسپتال پہنچایا گیا۔
 خیال رہے کہ سیاچن گلیشیئر قراقرم پہاڑی سلسلے میں واقع ہے اور یہ دنیا کا سب سے بلندی پر واقع فوجی علاقہ ہے۔ یہاں سردی کے موسم میں برفانی تودوں کا گرنا معمول کی بات ہے جبکہ یہاں کا درجہ حرارت منفی 50 ڈگری سیلسیئس سے بھی نیچے چلا جاتا ہے۔ 
  •                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                            انڈین خبروں کے لیے ’’اردو نیوز انڈیا‘‘ گروپ جوائن کریں

شیئر: